242

اہلیان تلہ گنگ کے خون کا حساب کون دے گا،اراکین اسمبلی و مشیر وزیر اعلی،اور خود کو خادم تلہ گنگ سمجھنے والوں کی خاموشی الیمہ فکر ہے،حاجی عمر حبیب

تلہ گنگ (نمائندہ بے نقاب)تلہ گنگ کی شاہراہیں خونی شاہراہوں کے نام سے منسوب ہو چکی ہیں ،حادثات میں ہونی والی جانوں کے ضیاع کے خون کا حساب کون دے گا

،اراکین اسمبلی و مشیر وزیر اعلی،اور خود کو خادم تلہ گنگ سمجھنے والوں کی خاموشی الیمہ فکر ہے ،ان خیالات کا اظہار مسلم لیگ ق کے مرکزی رہنما حاجی عمر حبیب کے اپنے ایک بیان کیا ان کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن کے ہمشہ اپنے مفادات کی سیاست کی ہے ،ان کے دور اقتدار میں غریب عوام کے حصے میں محرومیوں ،مہنگائی کے سوا کچھ نہ آسکا ،گڈگورنینس کے دعوے دعوے ہی رہ گئے ہیں

،ان کا مزید کہنا تھا کہ تلہ گنگ کی شاہراہوں کی حالات کھنڈرات سے بدتر ہو چکی ہے ۔عوام اپنے پیاروں کی لاشیں اٹھا اٹھا کر تھک چکے ہیں، حادثات نے کئی ماوءں کی گودیں اجاڑ دیں اور کئی معصوم بچوں کی باپ کی شفقت سے محروم ہو چکے ہیں ،مزید کہنا تھا کہ تلہ گنگ کی شاہراہوں پر ہونے انسانی جانوں کا ضیاع افسوناک ہے لیکن اس پر تلہ گنگ پر 40سال راج کرنے والے دعوے داروں اور خود کو خادم تلہ گنگ کا لقب اپنانے والوں کی خاموشی فکر کا المیہ ہے،

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں