483

ضلع چکوال کی دو قومی اور چار صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر پر کانٹے دار مقابلے کیلئے میدان لگنا شروع ، فیورٹ کون؟

چکوال( نمائندہ بے نقاب)ضلع چکوال کی دو قومی اور چار صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر پر کانٹے دار مقابلے کیلئے میدان لگنا شروع ہوگیا ہے۔ سردار غلام عباس کی وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کیساتھ ملاقات نے کئی شکوک و شہبات دور کر دیے ہیں اورسرداران چکوال کے حامیوں کی باڈی لینگویج

اس ملاقات کے بعد مختلف ہوگئی ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ حلقہ این اے64میں سردار غلام عباس ہی فیورٹ ہیں۔ کیونکہ سردار غلام عباس اس وقت ضلع چکوال کی وہ سیاسی شخصیت ہیں جنہوں نے2013کے انتخابات میں چکوال قومی اسمبلی کی نشست پر ایک لاکھ9ہزار اور پی پی22 تلہ گنگ میں 48ہزار ووٹ آزاد امیدوار کی حیثیت سے حاصل کیا تھا۔ دوسری طرف میجر طاہر اقبال کے قریبی حلقے یہ دعویٰ کر رہے ہیں کہ 2013 کا سیٹ اپ ہی برقرار رکھا جائے گا۔ سلطان حیدر علی اور بیگم عفت لیاقت کی ملاقات کے دوران ان کے نام سے سرداران چکوال پر جو تبصرہ ہوا ہے اس پر چوہدری سلطان حیدر نے دو ٹوک الفاظ میں ترید کر دی ہے مگر اس حوالے سے سرداران چکوال کے کیمپ میں کافی بے چینی دکھائی دیتی ہے۔ پاکستان تحریک انصاف کا تمام تر انحصار مسلم لیگ ن کے ٹکٹوں کی تقسیم پر ہے، راجہ یاسر سرفراز نے سائیڈ پر ہوکر تمام صورتحال کا باریک بینی سے جائزہ لینا شروع کر دیا ہے، بے شک متاثرین مسلم لیگ ن پی ٹی آئی کو2018کے انتخابات میں بڑی تقویت دے سکتے ہیں اور پی ٹی آئی نے فراخدلی کا مظاہرہ کرتے ہوئے متاثرین کیلئے اپنے دامن کو کھول دیا تو یقینی طو پر پھر دو قومی اور چار صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر کانٹے دار مقابلے ہونگے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں