455

حلقہ این اے65،پی پی23اور پی پی 24میں جہاں سیاسی جوڑ توڑ عروج پر، سوشل میڈیا پرمختلف سیاسی شخصیت بارے افواہوں کا طوفان بھی تھم نہ سکا، سابق ضلع ناظم چکوال سردار غلام عباس پہلے نمبر پر

تلہ گنگ(نمائندہ بے نقاب) حلقہ این اے65،پی پی23اور پی پی 24میں جہاں سیاسی جوڑ توڑ عروج پر پہنچ گیاوہیں سوشل میڈیا پرمختلف سیاسی شخصیت بارے افواہوں کا طوفان بھی تھم نہ سکا ۔ن لیگ کے رہنماء سابق ضلع ناظم چکوال سردار غلام عباس ان دنوں سب سے زیادہ ڈسکس ہونے والی سیاسی شخصیت ہیں۔

جن کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ ن لیگ کی جانب سے اُنہیں ٹکٹ دینے کی یقین دہانی نہ ملنے پراُن کے پاکستان تحریک انصاف سے رابطے بڑھ گئے ہیں اور وہ کسی وقت بھی ایکبار پھر پی ٹی آئی میں اڑان بھر سکتے ہیں ۔تاہم سردار غلام عباس کے قریبی ذرائع کے مطابق سردار غلام عباس15مئی سے ٹکٹ کی درخواستیں مانگنے والی ن لیگ کو ٹکٹ کی درخواست دیں گے ۔اور آخری وقت تک ن لیگ کے ٹکٹ کا انتظار کرینگے ۔اگر ن لیگ نے ٹکٹ نہ دیا اور موجودہ پارلیمنٹرین کو ہی برقرار رکھا تو پھر وہ اپنی ٹیم کے ہمراہ آزاد حیثیت سے میدان میں اُتریں گے ۔دوسری جانب ذرائع کے مطابق اس وقت ن لیگ کے ٹکٹ کے لئے پر جوش اُمیدواران نگران سیٹ اپ کے دوران ن لیگ کے ٹکٹ سے دستبردار ہو سکتے ہیں ۔اس لئے ن لیگ کی قیادت نگران سیٹ اپ کے دوران ہی اپنے ٹکٹوں کا فیصلہ کریگی ۔حلقہ این اے65پر پی ٹی آئی اور ق لیگ کا اتحاد بھی متوقع ہے ۔اگر پی ٹی آئی ق لیگ کے اُمیدوار سابق وزیر اعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الہٰی کو سپورٹ کریگی تو بدلے میں صوبائی اسمبلی کی دونوں سیٹوں پر اپنے اُمیدواروں کیلئے حمایت طلب کر سکتی ہے ۔اگر اس صورتحال پر دونوں پارٹیوں میں معاملات طے نہ ہوئے تو ن لیگ کو فائدہ ملے گا ۔روز بروز بدلتی صورتحال31مئی کے بعد ہی واضع ہو سکے گی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں