381

چکوال شہر کو گزشتہ تین انتخابات میں مسلم لیگ ن کا مضبوط قلعہ قرار دیا جاتا رہا ہے، چکوال شہر سے پی ٹی آئی کی کامیابی میں کلیدی کرداران نوجوانوں نے ادا کیا

چکوال(نمائندہ بے نقاب)چکوال شہر کو گزشتہ تین انتخابات میں مسلم لیگ ن کا مضبوط قلعہ قرار دیا جاتا رہا ہے۔ مگر 25جولائی کے انتخابات میں مجموعی طور پر

پاکستان تحریک انصاف نے اڑھائی سے تین ہزار ووٹوں کی واضح برتری مسلم لیگ ن پر حاصل کی، میونسپل کمیٹی چکوال کی37وارڈز میں کل 80پولنگ اسٹیشنز قائم کیے گئے تھے جس میں پاکستان تحریک انصاف نے22ہزار سے زائد ووٹ حاصل کیے جبکہ مسلم لیگ ن کو 19ہزار سے زائد ووٹ ملے۔ پی ٹی آئی کے راجہ یاسر سرفراز اور مسلم لیگ ن کے سلطان حیدر علی کے ووٹوں کا تقابلی جائزہ پیش کیا جائے تو اس میں مجموعی طور پر 45پولنگ اسٹیشنوں پر راجہ یاسر سرفراز نے جبکہ باقی35پولنگ اسٹیشنوں پر سلطان حیدر علی نے کامیابی حاصل کی۔ چکوال شہر سے پی ٹی آئی کی کامیابی میں کلیدی کرداران نوجوانوں نے ادا کیا جن کے پہلی دفعہ ووٹ انتخابی فہرستوں میں شامل ہوئے اور ان کی عمریں18سے22سال کے درمیان تھیں۔ ایک انتخابی ماہر کے مطابق ان نوجوانوں کے والدین تو مسلم لیگ ن کے کیمپوں میں فرنٹ لائن پر دیکھے گئے مگر ان کے گھروں کے اندر نوجوانوں اور خواتین نے ووٹ خفیہ طور پر بلے کو ہی ڈالا جس کی وجہ سے مسلم لیگ ن کے امیدواروں کو شدید مایوسی ہوئی کہ وہ چکوال شہر میں کس طرح شکست کھا گئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں