221

جناح بیراج کے مقام سے نکلنے والی ایشیاء کی سب سے بڑی نہر تھل کنال کو سالانہ صفائی اور مرمت کے لیے 13جنوری سے 31تک مکمل طور پر بند کردیا گیا

میانوالی(نمائندہ بے نقاب)جناح بیراج کے مقام سے نکلنے والی ایشیاء کی سب سے بڑی نہر تھل کنال کو سالانہ صفائی اور مرمت کے لیے 13جنوری سے 31تک مکمل طور پر بند کردیا گیاجبکہ سی پیک پر ہونے والے کام کیوجہ سے اس سے نکلنے والے بخارا، پائی خیل ، داؤدخیل مائنر پر پہلے بھی کئی بار پانی بند کر دیا گیا

تھا جسکی وجہ سے کسانوں کو مشکلات کا کافی سامنا کرناپڑا ہے اور مہنگے داموں ٹیوب ویلوں کا پانی لگاناپڑا ہے ۔جب کہ اسکی بندش میں مزید اضافہ بھی ہو سکتا ہے۔ تھل کنال سے میانوالی، لیہ ،بھکر، خوشاب اور مظفر گڑھ کی لاکھوں ایکڑ اراضی سیراب ہوتی ہے ۔ اسکی بندش سے پانچوں اضلاع کی فصلیں متاثر ہونے کا خدشہ ہو سکتا ہے کیونکہ بارشوں کے نہ ہونے سے پہلے بھی فصلیں متاثر ہوئی ہیں ، مذکورہ نہر جوکہ ایشیاء کی سب سے بڑی نہر ہے اور اس میں گرمیوں میں 8500کیوسک پانی چھوڑا جاتا ہے جبکہ گندم کے بوائی کے موسم میں اس میں 7000کیوسک پانی چھوڑا جاتا ہے جس سے نہروں کے علاوہ راجباہوں میں بھی پانی موجود رہتا ہے اور کسان اس سے اپنی فصلوں کو پانی دیتے ہیں اب جبکہ اس نہر کو یکم جنوری سے سالانہ صفائی اور مرمت کے لیے آہستہ آہستہ پانی کو ڈاؤن کیا گیا اور اب اس وقت اس میں 700کیوسک پانی موجود ہے اور 13جنوری سے31 جنوری تک اس کو مکمل طور پر بند کردیا گیا ہے جس سے گندم کی فصل کی پیدوار متاثر ہونے کا خدشہ لاحق ہو گیا ہے کیونکہ اس دفعہ بارشیں بھی بہت کم ہو رہی ہیں لہذا کسانوں نے اس کو جلد از جلد صفائی اور مرمت کرکے جلد کھولنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اور نہر کی صفائی اور مرمت کے ساتھ ساتھ راجباہوں کی بھل صفائی بھی وقت پر کرنے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ ٹیل تک پانی آسانی سے پہنچ سکے۔جبکہ سی پیک پر ہونے والا کام جو نہر تھل پر پل بنانے یا راجباہوں کے درمیان ہونا ہے اس کو بھی بروقت مکمل کیا جائے تاکہ کسانوں کو مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے کسانوں نے وزیر آبپاشی اور وزیراعلیٰ پنجاب سے بھر پور مطالبہ کیا ہے کہ نہر کی بندش کے دوران بھل صفائی اور نہر کی مرمت کے کروڑوں روپے کے ٹھیکے ہوتے ہیں جن پر معیاری کام نہیں ہوتا اور ٹھیکیدار کام بھی ادھورا چھوڑ دیتے ہیں اس کی بھی محکمہ نہر مکمل طور پر نگرانی کرے اور کام کو بروقت اور معیاری بنانے کا تہیہ کرے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں